ٹائنز کمپنی کا شرعی حکم۔(جامعۃ الرشید کراچی)۔


:: سوال

ٹائنز (TINES )کے نام سے ایک کمپنی پاکستان میں اپنا بزنس کررہی ہے ۔جو علاج بالغذاء کے قانون کے تحت لوگوں کی بیماریوں کا علاج کرنے کے لیے فوڈ کمپلیمینٹ آن لائن فروخت کرتی ہے ۔اس کے علاوہ گھریلو استعمال کی اشیاء بھی فروخت کرتی ہے ۔جبکہ دنیاکے 9 ممالک میں اس کے اپنے پروڈکشن پلانٹ ہیں ۔اور 170 ممالک میں اس 
کابزنس پھیلاہواہے ۔اس کی بنائی گئی مصنوعات بہت اچھی شہرت کی حامل ہیں اورجوخصوصیات کمپنی کے نمائندوں کی طرف سے بتائی جاتی ہیں ۔وہ تمام ان اشیاء میں موجود ہوتی ہیں ۔اوریہ کمپنی اپنی مصنوعات ڈائریکٹ سیلنگ کے ذریعہ سے صرف اپنے مقررکردہ سینٹرز اورنمائندوں کے ہاتھوں ہی فروخت کرتی ہے ۔اوراپنے فروخت کنندگان کو 
سچائی اورایمانداری سے مصنوعات فروخت کرنے کا پابند بناتی ہے ۔اور جھوٹ بول کر اشیاء فروخت کرنے سے منع کرتی ہے ا۔کیونکہ کمپنی کے کتابچہ میں لکھاہواہے کہ مثبت رویے اورسوچ سے آپ کو منز ل سے کوئی چیز دورنہیں کرسکتی ہے ۔جبکہ غلط سوچ اوررویے سے آپ کو منزل نہیں مل سکتی ۔چنانچہ مصنوعات میں وہ خواص بیان نہ کیے جائیں جوان میںموجود نہ ہوں ۔اور واضح رہے کہ تمام فوڈ کمپلیمنٹ میں حرام اشیاء نہیں ہوتی ۔ بزنس کا طریقہ کار: 
کمپنی چونکہ اپنی مصنوعات صرف مقررکردہ ڈیلرز کے ہاتھوں ہی فروخت کرتی ہے ۔عام مارکیٹ میں یہ اشیاء موجود نہیں ہوتیں ۔چنانچہ کمپنی سب سے پلے 1250 روپے لے کر فروخت کنندہ کو اپنے نمائندے کی حیثیت سے رجسٹرکرتی ہے ۔اور اس کو اسٹارون(*1 )کا رینک دیتی ہے ۔اور 7pv کا ایک بونس دیتی ہے ۔آگے چلنے سے پہلے چند خاص باتوں کی وضاحت کرتاچلوں تاکہ مسئلہ سمجھنے میں اوربعد میں فتویٰ دینے میں آسانی رہے ۔ نمبر۱:یہ کہ جہاں بھی لفظ ppv استعمال ہوگا ۔اس سے مراد پرسنل پوائنٹ ویلیوہوگی ۔اورپرسنل پوائنٹ ویلیوکا ما انحصار مذکورہ رجسٹرڈ *1 کی ذاتی خریداری پر ہوگا۔یعنی *1 جتنی زیادہ خرید کرے گا اتنے ہی اس کے پرسنل پوائنٹ ویلیومیں اضافہ ہوگا۔اورجتنے ppv زیادہوں گے ۔ان کے حساب سے اس کی خریدی گئی اشیاء پر 20 فیصدرقم واپس ملے گی ۔ 
نمبر۲:یہ کہ جہاں بھی Gpv کا ذکر ہوگا اس سے مراد گروپ پوائنٹ ویلیو ہوگی ۔اور جی پی وی کا انحصار اس کی ٹیم میں شامل دیگر ارکان کی خرید پر ہوگا ۔اور جتنے جی پی وی ہوں گے اتنا ہی ٹیم لیڈرکو بونس اورفیصد میں کمیشن ملے گا۔یعنی یہ زیادہ محنت زیادہ خرید اور زیادہ منافع کے اصول پر عمل درآمد ہے ۔ نمبر۳:ppv یا Gpv ایک ڈالر کی مالیت کے برابر ہوتاہے ۔پاکستانی روپے میں جو ڈالر کی مالیت ہوگی ۔یعنی ایک ڈالر سے کچھ زائد کی خرید پر کمپنی اپنے نمائندوں کو ایک گروپ پوائنٹ ویلیو پا پرسنل پوائنٹ ویلیودیتی ہے ۔اگر اس کی ٹیم کی خریداری ہوتو جی پی وی ملتے ہیں ۔اور اگر اس کی ذاتی خریداری ہوتو پی پی وی ملیں گے ۔ 
اس وضاحت کے بعد عرض ہے کہ اب جو *1 رجسٹرڈ نمائندہ تھا جب اس کے پی پی وی 100 سے زیادہ ہوجائیں گے تو وہ *2 بن جاتاہے اورجب اس کے پی پی وی 300 سے زیادہ ہوں گے تو وہ *3 بن جائے گاجیساکہ ڈایاگرام سے واضح ہے ۔ *1 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔1250 روپے رجسٹرڈ ہونے پر 
*2 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔100PPV ہونے پر 
*3 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔300PPV ہونے پر 
اب یہ تھری اسٹار کمپنی کی مصنوعات کو فروخت کرنے کے لیے اپنی ٹیم بنائے گا۔اور اوپر بیان کردہ طریقے سے لوگوں کو کمپنی میں رجسٹرڈ کروائے گا ۔مگر واضح رہے کہ وہ جتنے لوگوں کو بھی محنت کرکے اپنی ٹیم میں شامل کرناچاہے کرسکتاہے ۔اور شامل یعنی رجسٹرڈ ہونے والے ہر فرد کے بدلے اورہرفرد کی خرید پر اس کے GPV میں اضافہ ہوگا ۔اوران GPV کے حساب سے اسی تھری اسٹار کو 15 فیصد کمیشن ماہ کے آخرمیں ملے گا۔واضح رہے کہ تھری اسٹار کو ہرون اسٹار کی خریداری پر GPVاور کمیشن ملے گا۔ اب جب مذکورہ تھری اسٹار کے رجسٹرڈ کروائے گئے ٹیم کے چارافراد مذکورہ طریقے سے تھری اسٹار بن جائیں گے ۔یا تھری اسٹار مذکورہ کے GPV ا1500 سء بڑھ جائیں گے ۔تو اب یہ تھری اسٹار ترقی کرکے فوراسٹار بن جائے گا۔اب جب اس فوراسٹار گروپ لیڈرکے چاروں تھری سٹار اپنے لیڈر کے طریقہ کار پر چلتے ہوئے اسی طریقے سے اپنے اپنے فورفوراسٹار بنائیں گے توان کو ترقی دے کر فوراسٹار اوران کے گروپ لیڈرکو فائیواسٹاربنادیاجائے گا۔اب اس فائیو اسٹار گروپ لیڈر کو اپنے رجسٹرڈ کروائے گئے چاروں فوراسٹار کی خریداری پر GPV اوراسی GPV پر 15% کمیشن کمپنی کی طرف سے ملے گا۔اوران چاروں فوراسٹار کے اپنے اپنے فورفوراسٹار یعنی 16افراد کی خریداری پر GPV اور اسی GPVپر 4.19%کمیشن ملے گا۔اسی طرح یہ سلسلہ اوپر تک چلتاجائے گا۔اورگروپ لیڈر اوران کی ٹیم کے دیگرارکان کی ترقی کمیشن اوررینک میں اضافہ ہوتاجائے گا ۔جبکہ گروپ لیڈر اپنے فوراسٹار کو کنٹرول کرے گا۔وہ اپنے سے نیچے والوں کو کنٹرول کرے گا ۔اوریوں یہ سلسلہ چلتارہے گا۔ واضح رہے کہ گروپ لیڈر کو اپنی ٹیم کو کنٹرول اورمتحرک اوراپنی آمدن میں اضافے کے لیے تین کام ضرور اورمسلسل کرناہوں گے ۔ 
۱)اسی مذکورہ نیٹ ورک کے ذریعہ سے اشیاء کی خرید وفروخت اوراستعما ل کرنااوراشیاء کی خصوصیات کے بارے میں علم حاصل کرنا۔ 
۲)اپنی ٹیم افراد میں اضافہ کرنے کے لیے محنت کرنا ۔ 
۳)اپنی ٹیم کے دیگر ارکان اورکمپنی میںنئے رجسٹرڈ ہونے والے لوگوں کو اشیاء کی خصوصیات کا علم دینا ان کی تربیت کرناکہ اشیاء کو کسیے فروخت کریں اوراستعمال کریں ۔اوراپنی ٹیم اورکمپنی کے نیٹ ورک میں کیسے اضافہ کیاجاسکتاہے۔ 
سوال نمبر۱:اب یہاں یہ دریافت طلب ہے کہ کیاگروپ لیڈر کا اپنے رجسٹرڈ کروائے گئے فوراسٹار اورپھر ان فوراسٹار کے آگے بنائے گئے سولہ تھری اسٹار کی خریداری میںسے کمیشن لیناجائز ہے یانہیں ؟جبکہ اس نے اپنے رجسٹرڈ کروائے گئے چاروں فوراسٹارپر تو ڈائریکٹ محنت کی ہوتی ہے مگران فوراسٹار کے سولہ تھری اسٹارپر ڈائریکٹ محنت نہیں ہوتی ،ہاں رہنمائی ضرورکرتاہے ۔واضح رہے کہ تمام کا تمام کمشین کمپنی اپنی سیل سے دیتی ہے ۔ٹیم کے دیگر ارکان کی کمشین سے نہیں کاٹاجاتا۔ایک اور بات واضح رہے کہ گروپ لیڈر کو فائیو اسٹار رینک پر پہنچنے کے بعد 50PV کی آٹوشپ کرنا ہوتی ہے ۔جو صرف ذاتی خریداری سے ہی ممکن ہے ۔اگر وہ نہیں کرتاتو ایک فیصد لیڈرشپ الاونس اوراپنی ٹیم کے GPV کے حساب سے فیصدمیں کمیشن ملے گا اور اگر وہ آٹوشپ نہیں 
کرتااورصرف PPV ہی بناتاہے تواس کو لیڈرشپ والا الاونس نہیںدیاجاتا ۔اور GPVمیں سے کمیشن کم کرلیاجاتاہے ۔پھر اس نے جتنے PPV بنائے ہوتے ہیں اسی شرح سے اس کو کمیشن ملتاہے ۔باالفاظ دیگر آٹوشپ نہ کرنے سے کمپنی اس کولیڈر نہیں سمجھتی اورگروپ میںمحنت کرنے سے کترانے والا سمجھتی ہے ۔مزید برآں یہ ہے کہ اگروہ خود خریداری نہیں کرتاتو اسکو مصنوعات اوران کے استعمال کا علم نہیں ہوسکے گا۔ہاں جتنی اس نے خریداری کرکے PPV بنائے ہوتے ہیں اتنا فیصد کے حساب سے کمیشن دیتی ہے ۔ 
سوال نمبر۲: 
اب دریافت طلب امریہ ہے کہ کیا کمپنی کا یہ لائحہ عمل جائز ہے یانہیں؟بالخصوص جبکہ کمپنی میں لیڈرشپ یا ترقی کے لیے محنت کو دارومداربنایاگیاہے اور GPVاورPPV اس کی مثال ہیں ۔اورمزید برآں کہ یہ مذکورہ کمپنی میں رجسٹرڈ ہوناجائز ہوگا یانہیں ؟برائے مہربانی وضاحت کے ساتھ وجواب سے نوازیں 

:: جواب

الجواب باسم ملھم الصواب

۱)اسکیم کا مقصد: 
اسکیم کامقصد پروڈکٹ کی فروختگی ہے یا بذریعہ کسٹمر سازی لوگوں سے رقم جمع کرنا۔پہلی بات تو بظاہر درست معلوم نہیںہوتی ۔اس لیے کہ اگر مقصد پروڈکٹ کی فروختگی ہوتویہ پروڈکٹ مارکیٹ میں دستیاب ہونی چاہیے یا کمپنی کے اسٹورپر صارفین کو ملنی چاہیے جب کہ ایسانہیںاوراس طرح ا ن اشیاء کی بازاری قیمت کے مقابلہ میں یہ اشیاء وہاں سے زیادہ مہنگی بھی ملتی ہیں ۔اس کے باوجود بھی صارف وہاں سے لینے کے لیے تیارہوجاتے ہیں ۔لہذااسکیم کا مقصد بذریعہ ممبرسازی لوگوں سے رقم جمع کرانا اورکو کمیشن کارڈ کا لالچ دیناہوا۔ ۲)ممبرشپ کی فقہی تکییف: 
اوریہ طریقہ جوئے کی ایک صورت ہے کیونکہ کمپنی کا طریقہ کار یہ ہے کہ وہ اولا صارف سے رجسٹریشن فیس لیتی ہے جس کی مقدار بعض جگہوں پر 1250 اور بعض جگہوں پر 1150 ہے ۔اس میں سے بھی 900 رجسٹریشن فیس ہے جبکہ بقیہ رقم کمپنی کانمائندہ اپنے اخراجات کے لیے رکھتاہے ۔اس لیے اس کی مقدار کم زیاد ہ ہوتی ہے ۔اس کے بعد کمپنی کی طرف سے ممبرکو ایک رجسٹریشن کارڈ اورکتابچہ وغیرہ دیاجاتاہے ۔ممبرکا کمپنی میں رجسٹریشن سے مقصد مزید ممبران بنانے پر کمیشن یا ذاتی خریداری پر ڈسکاونٹ کی توقع ہوتی ہے ۔جس کی محض امید ہوتی ہے ملنا یقینی نہیں ہوتا۔کیونکہ PV پر 20% ریٹرن اور GPVپر 15% کمیشن ملنے کے لیے 300PV یعنی تھری اسٹار ہوناضروری ہے ۔اوراگر ایسانہ کرسکا تو کمیشن بالکل نہیںملے گابلکہ رجسٹریشن فیس کی مد میں جمع کرائی جانے والی زائد رقم بھی ڈوب جائے گی 
اس تفصیل سے یہ بات واضح ہوتی ہے کہ اسکیم کا یہ طریقہ کار جوئے کی ایک صورت ہے کیونکہ اس میں رقم اس طورپر داوپر لگائی جاتی ہے کہ یا وہ مزید رقم (کمیشن کی صورت میں )کھینچ لائے یا اصل ہی ڈوب جائے گی اوریہی قمارہے ۔ 
۲)دوسری بات یہ ہے کہ ٹائنز میں بطورایجنٹ کمیشن کمانے کے لیے خودایجنٹ کے لیے پروڈکٹ کو خریدنا لازم ہے اگریہ پروڈکٹ نہ خریدے تو ایجنٹ نہیںبن سکتالہذاایک معاملے کو دوسرے کے ساتھ مشروط کرنا لازم آتاہے جو کہ سود کے زمرہ میں آتاہے ۔اس لیے ٹائنز کمپنی کا یہ طریقہ کار کاروبار سود ،جوئے پر مبنی ہونے کی وجہ سے بالکل ناجائز اورحرام ہے ۔لہذاکمپنی کی ممبرشپ اختیارکرنا اورکمیشن وغیرہ کماناجائز نہیں ۔اس لیے مسلمانوںپر لازم ہے کہ حرام خوری کے ان حیلوںبہانوں سیاحتراز کریں ۔ 
واللہ سبحانہ وتعالیٰ اعلم 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

ماہانہ فہرست

QURAN ACADEMY ISLAMABAD

The aim of Quran Academy Islamabad is to disseminate and propagate the Knowledge and Wisdom of The Holy Qur’an on a vast scale and at highest intellectual level so as to achieve the revitalization of Faith among the Muslims.

پروفیسر عقیل کا بلاگ

Please visit my new website www.aqilkhan.org

International Islamic Library Online (IILO)

Donate Your Books at: Deenefitrat313@gmail.com ..... (Mobile: + 9 2 3 3 2 9 4 2 5 3 6 5)

وائس آف پاکستان

نیرنگیء آزادی ہے مغرب کی غلامی : جمہور کا دستور کہ منشورِ صلیبی

ISLAMIC BOOKS LIBRARY

Authentic Site for Authentic Islamic Knowledge

Nukta313

نکتہ

Online Free Books

Urdu & English Islamic Ebooks Library | PDF & Audio Format | Online Quran institute | Learn Online Quran from Qualified Tutor | e quran academy & school

SCHOOL OF QURAN ONLINE

We Teach All Over The World Almost all islamic Subjects Online. Specially Quran Reading, Tajveed, Memorization، Qur'an Translation

%d bloggers like this: